International News
Trending

Was the missile really handled by its armed forces or by some rogue elements?

ISLAMABAD: Foreign Ministry spokesman said that India should explain how the missile entered Pakistan, the decision of internal judicial investigation is not enough, Pakistan demands joint investigation.

According to details, after the official confession of the accidental firing of the missile by India, the Foreign Ministry spokesman said in a statement that Pakistan has taken note of the statement of the Indian Ministry of Defense, expressing regret over the accidental fall of the missile Sorry for the inconvenience.

The spokesperson said that the simple explanation offered by the Indian authorities was not enough and India would have to answer some questions.

The Foreign Ministry said that India should explain the mechanism of accidental missile launch and interception, the type and characteristics of the missile need to be clearly stated, the flight path of the missile, the speed must be explained.

The spokesman asked India how the missile finally turned and entered Pakistan. Was the missile equipped with a self-destruct mechanism? Are Indian missiles being launched for routine maintenance?

The Foreign Ministry further said that they were waiting for recognition from Pakistan until an explanation was sought. Was the missile really handled by its armed forces or by some rogue elements?

The spokesman said that the incident pointed out several serious shortcomings and technical shortcomings.

Was the missile really handled by its armed forces or by some rogue elements?

اسلام آباد : ترجمان وزارت خارجہ کا کہنا ہے کہ بھارت وضاحت کریں میزائل پاکستان میں کیسے داخل ہوا، اندرونی عدالتی تحقیقات کا فیصلہ کافی نہیں، پاکستان مشترکہ تحقیقات کا مطالبہ کرتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق بھارت کی جانب سے میزائل کے حادثاتی فائرنگ کے سرکاری اعتراف کے بعد ترجمان وزارت خارجہ نے بیان میں کہا ہے کہ پاکستان نےبھارتی وزارت دفاع کےبیان کانوٹس لیاہے، بیان میں میزائل کی حادثاتی طور پر گرنے پر افسوس کا اظہار کیا گیا، اندرونی عدالتی تحقیقات کے فیصلے پر افسوس ہے۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ بھارتی حکام کی جانب سے پیش کردہ سادہ وضاحت کافی نہیں ہے، بھارت کو کچھ سوالات کے جوابات دینا ہوں گے۔

وزارت خارجہ نے کہا کہ بھارت کو حادثاتی میزائل لانچ اور روکنے کی طریقہ کار کی وضاحت کرنی چاہیے، میزائل کی قسم اور خصوصیات کو واضح طور پر بیان کرنے کی ضرورت ہے، میزائل کی پرواز کے راستے، رفتار کی وضاحت کرنی ہوگی۔

ترجمان نے بھارت سے سوالات کئے کہ میزائل آخرکارکیسے مڑ کر پاکستان میں داخل ہوا؟ کیا میزائل خود کو تباہ کرنے کے طریقہ کار سے لیس تھا؟ کیاہندوستانی میزائلوں کو معمول کی دیکھ بھال کے تحت بھی لانچ کیلئے رکھا گیا ہے۔

وزارت خارجہ نے مزید کہا پاکستان کی جانب سے وضاحت طلب کیے جانے تک تسلیم کرنے کا انتظارکیوں کیا؟ کیا واقعی میزائل کو اس کی مسلح افواج نے ہینڈل کیا تھا یا کچھ بدمعاش عناصرنے؟

ترجمان کا کہنا تھا کہ واقعہ سنگین نوعیت کی کئی خامیوں اورتکنیکی خامیوں کی نشاندہی کرتاہے، بھارت کااندرونی عدالتی تحقیقات کا فیصلہ کافی نہیں، پاکستان حقائق کا درست تعین کرنے کیلئے مشترکہ تحقیقات کا مطالبہ کرتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button