Breaking news

The United States will continue to sell arms to Saudi Arabia

The United States has said it will not suspend arms sales to Saudi Arabia.

The White House has said that the United States has concerns about human rights abuses by Saudi Arabia, but that arms embargoes on Saudi Arabia are not currently on the agenda.
White House spokeswoman Jane Sackie asked if the United States would take action to stop arms sales to Saudi Arabia. "This issue is not on the agenda at the moment, we have a long standing relationship with Saudi Arabia. We have expressed our concerns to Saudi Arabia on human rights and many other issues," he said. Our security relationship with the country is part of the United States' interest. "

"We call any incident that kills innocent people a tragedy," Saki said, referring to the deaths of several people in an airstrike by Saudi-led Arab coalition forces in Yemen's western province of Al Hudaydah. We are sensitive about that. "
The United States will continue to sell arms to Saudi Arabia

امریکہ نے اعلان کیا ہے کہ وہ سعودی عرب کو ہتھیاروں کی فروخت نہیں روکے گا۔

وائٹ ہاؤس نے اعلان کیا کہ امریکہ کو سعودی عرب کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر تحفظات ہیں تاہم سعودی عرب کو ہتھیاروں کی فروخت روکنے کا معاملہ فی الوقت ایجنڈے میں شامل نہیں ہے۔

وائٹ ہاؤس کی ترجمان جین ساکی نے ایک سوال کہ کیا امریکہ سعودی عرب کو ہتھیاروں کی فروخت روکنے کے لیے کوئی کارروائی کرے گا؟ کے جواب  میں کہا کہ:’’ “یہ مسئلہ اس وقت ایجنڈے میں شامل نہیں، سعودی عرب کے ساتھ ہمارے دیرینہ تعلقات قائم ہیں۔ ہم نے انسانی حقوق اور دیگر بہت سے معاملات پر اپنے تحفظات کا اظہار سعودی عرب سے کر رکھا  ہے۔ اس ملک  کے ساتھ ہمارے  سیکورٹی تعلقات متحدہ امریکہ کے مفاد  کا ایک حصہ ہیں۔”

ساکی نے یمن کے مغربی  صوبے الحدیدہ پر سعودی عرب کی قیادت کی عرب اتحادی افواج کے فضائی حملے میں متعدد افراد کی ہلاکت کے حوالے سے کہا، “کوئی بھی واقعہ جو معصوم لوگوں کی موت کا باعث بنتا ہے ہم اسے  ایک المیہ قرار دیتے ہیں، ہم اس بارے میں حساسیت سے کام لیتے ہیں۔”

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button