Breaking news

The highest-earning, young student surprised everyone

Jakarta: The Indonesian student's fortunes changed when he turned a collection of selfies into non-fungible tokens and earned 12 1.2 million from it while he considered it a joke.
Sultan Gustaf al-Ghazali, a computer science student, took nearly a thousand photos of himself sitting in front of a computer over a four-year period and created them into NFTs (a unique digital item that can be bought and sold in a blockchain and The actual value of each of them is set at zero point 00001 ETH (US  3) before being converted to.
But soon their prices skyrocketed and caught the attention of high-risk crypto traders, with each individual photo selling for more than  10,000.

He tweeted on January 10 to upload my picture in NFT LOL. The next day he tweeted: I can't believe people are buying my picture NFT and it all sold out in one day.
"I never thought anyone would want to buy me a selfie, so I put a price tag of  3 million on it," he added.
The highest-earning, young student surprised everyone

جکارتہ : انڈونیشی طالب علم کی تقدیر اس وقت بدل گئی جب اس نے سیلفیز کے ایک کلیکشن کو نان فنجیبل ٹوکنز میں تبدیل کرکے اس سے12 لاکھ ڈالر کمالیے جبکہ وہ اسے مزاح پر مبنی چیز سمجھ رہا تھا۔

سلطان گستاف الغزالی جو کہ کمپیوٹر سائنس کا طالب علم ہے اس نے چار برس کے عرصے کے دوران اپنی لگ بھگ ایک ہزار تصاویر کمپیوٹر کے سامنے بیٹھ کر بنائیں اور انہیں این ایف ٹیز (ایک منفرد ڈیجیٹل آئٹم جسے ایک بلاک چین میں خرید و فروخت اور اسٹور کیا جاسکتا ہے) میں تبدیل کرنے سے قبل ان میں سے ہر ایک کی اصل قیمت صفر اعشاریہ 00001 ای ٹی ایچ (تین امریکی ڈالر) مقرر کی۔

لیکن جلد ہی ان کی قیمتیں بڑھنے لگیں اور ہائی رسک کرپٹو ٹریڈرز کی توجہ حاصل کرلی اور ہر ایک انفرادی تصویر دس ہزار ڈالرز سے زیادہ میں فروخت ہونے لگی۔

اس نے10 جنوری کو اس حوالے سے ٹوئٹ کیا کہ میری تصویر این ایف ٹیز میں اپ لوڈ کریں ایل او ایل۔ اگلے دن اس نے ٹوئٹ کیا یقین نہیں آتا کہ لوگ میری تصویر این ایف ٹی خرید رہے ہیں اور یہ ساری ایک دن میں فروخت ہوگئی ہیں۔

اس کا مزید کہنا تھا کہ میں نے کبھی سوچا بھی نہ تھا کوئی میری سیلفی خریدنا چاہے گا، اسی لیے میں نے ان کی قیمت تین ڈالر رکھی، واضح رہے کہ اس نے اس طرح12 لاکھ ڈالر حاصل کیے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button