Uncategorized

The disaster caused by a volcanic eruption, appeal for help from the world

The Pacific island nation of Tonga has called on the world to provide water and food in the wake of the volcanic eruption.

The country is in a state of emergency following the catastrophic disaster in Tonga, which is facing severe shortages of food and water, prompting authorities to call on Danba to provide water and food.
The epicenter was reported below the Pacific Ocean floor, however; no tsunami alert was issued. The epicenter was reported below the Pacific Ocean floor, however; no tsunami alert was issued.
The volcanic eruption has severely damaged the communications system in Tonga and the initial loss of life and property has not yet been determined.

The International Committee of the Red Cross (ICRC) estimates that 80,000 people will be affected by the tsunami in Tonga.
Australia and New Zealand have sent two aid planes to Tonga following the tsunami and are in contact with the United States, France and other countries for humanitarian aid.
According to the Australian Minister, initial reports indicate that the tsunami caused severe damage to roads and bridges, and that a British citizen was reported missing after the tsunami. It can be said.

The Prime Minister of New Zealand has said that the tsunami has caused massive destruction in Tonga but no casualties have been reported so far.
The disaster caused by a volcanic eruption, appeal for help from the world

بحرالکاہل میں واقع جزیرائی ملک ٹونگا نے سمندر میں پھٹنے والے آتش فشاں سے ہونے والی تباہی کے بعد دنیا سے پانی اور خوراک دینے کی اپیل کی ہے

ٹونگا میں آنے والی تباہی کے بعد ملک میں ہنگامی حالت کا نفاذ ہے جب کہ خوراک اور پانی کی شدید قلت کا سامنا ہے جس کے بعد حکام نے دنبا سے پانی اور خوراک فراہم کرنے کی اپیل کردی ہے۔

غیر ملکی نیوز ایجنسی کے مطابق گزشتہ ہفتے بحرالکاہل میں واقع جزیرائی ملک ٹونگا میں زیرسمندر آتش فشاں پھٹنے سے آنے والے سونامی کو 1991 میں فلپائن میں آنے والے سونامی کے بعد بدترین سونامی قرار دیا جارہا ہے۔

آتش فشاں پھٹنے کے باعث سمندر کے ابل پڑنے سے ٹونگا میں مواصلاتی نظام کو شدید نقصان پہنچا ہے اور اب تک ابتدائی جانی اور مالی نقصان کا تعین بھی نہیں کیا جاسکا ہے۔

بین الاقوامی تنظیم صلیب احمر نے ٹونگا میں سونامی کے باعث 80 ہزار لوگوں کے متاثر ہونے کا خدشہ ظاہر کیا ہے۔

ٹونگا میں سونامی کے بعد آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ نے ٹونگا میں امداد کے لیے 2 طیارے روانہ کیے ہیں اور وہ انسانی بنیاد پر امداد کے لیے امریکا، فرانس اور دیگر ممالک سے بھی رابطے میں ہیں۔

آسٹریلوی وزیر کے مطابق ابتدائی خبروں سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ سونامی سے سڑکوں، پلوں کو شدید نقصان پہنچا ہے اور سونامی کے بعد ایک برطانوی شہری کے لاپتہ ہونے کی بھی اطلاعات ہیں تاہم بڑے پیمانے پر ہلاکتوں سے متعلق ابھی مصدقہ طور پر کچھ نہیں کہا جاسکتا ہے۔

نیوزی لینڈ کی وزیراعظم نے کہا ہے کہ سونامی نے ٹونگا میں بڑے پیمانے پر تباہی پھیلائی ہے تاہم اب تک کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button