Uncategorized

Saudi Arabia: Alarm for Foreign Employees

Riyadh: In Saudi Arabia, under Saudiization, jobs are being given to locals instead of foreign employees.

According to Arab media reports, the Saudi government has also decided on 75% Saudiization in the energy sector, meaning that only 25% of the workers in this profession will be migrant workers and the rest will be recruited locally.
Saudi Energy Minister Prince Abdulaziz bin Salman has announced that the rate of Saudiization in the energy sector will be increased to 75% by 2030.
He said Saudi Crown Prince Mohammed bin Salman was focusing on national goods.
Prince Abdulaziz says Saudi Arabia is an energy-rich state, and our young people are taking steps to make Vision 2030 a success that is no less than a blessing.
He further said that alternative sources of energy would be wisely adopted.
The Minister of State for Energy believes that the concept of Carbon Circular Economy will enable us to continue producing, exporting and reaping the financial benefits of hydrocarbons.
Saudi Arabia: Alarm for Foreign Employees

ریاض: سعودی عرب میں سعودائزیشن کے تحت غیرملکی ملازمین کی جگہ مقامی شہریوں کو نوکریاں دی جاری ہیں۔

عرب میڈیا کی رپورٹ کے مطابق سعودی حکومت نے توانائی کے شعبے میں بھی 75 فیصد سعودائزیشن کا فیصلہ کیا ہے یعنی اس پیشے میں صرف 25 فیصد تارکین وطن ورکرز ہوں گے باقی مقامی بھرتی کیے جائیں گے۔

سعودی وزیر توانائی شہزادہ عبدالعزیز بن سلمان نے اعلان کیا ہے کہ توانائی کے شعبے میں 2030 تک سعودائزیشن کی شرح 75 فیصد تک پہنچا دی جائے گی۔

انہوں نے بتایا کہ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان ملکی اشیا پر توجہ مرکوز کیے ہوئے ہیں۔

شہزادہ عبدالعزیز کا کہنا ہے کہ سعودی عرب توانائی کی مالک ریاست ہے، ہمارے نوجوان وژن 2030 کو کامیاب بنانے کے لیے اقدامات کررہے ہیں جو کسی نعمت سے کم نہیں ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ توانائی کے متبادل ذرائع سوچ سمجھ کر اپنائے جائیں گے۔

مملکت کے وزیر توانائی کا ماننا ہے کہ کاربن سرکلر اکانومی کا تصور ہمیں ہائیڈرو کاربن کی پیداوار جاری رکھنے، برآمد کرنے اور اس سے مالی فائدہ اٹھانے کے قابل بنائے گا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button