Breaking news

Cyber ​​network of Indian intelligence agency RAW exposed in Karachi

The computer of accused Sufyan was arrested from Rizvia area of ​​Karachi.

According to ARY News, accused Sufyan Naqvi was arrested from Rizvia area who was recruited as a project coordinator in Maldives.
Officials said that important evidence has been found from the computer and mobile phone of the arrested accused, which is being examined forensically. In this regard, they will also seek help from the FIA ​​and recommend setting up a JIT for interrogation of the accused.
According to investigators, Sufyan was offered a job online as a project coordinator in Pakistan and the alleged Indian handler with a British number settled the employment matters.

In this regard, the officials further said that the accused was given a monthly salary of Rs. 30,000 to 50,000 by the female handler.
Sufyan's job was to spread hateful propaganda against Pakistan for which he was provided hateful material about the Pakistan Army, especially the C-Pak.
The accused was instructed to stay in touch with anti-Pakistan elements and was also informed about the use of various apps to hide his identity.
Investigators say RAW's target is educated youth and they are offered jobs online. According to them, the search for other members of the network is also underway.

کراچی میں رضویہ کےعلاقےسےگرفتارملزم سفیان کےکمپیوٹرسےاہم سراغ مل گئے، پولیس اور حساس اداروں پرمشتمل ٹیم کی ملزم سے مشترکہ تحقیقات۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق ملزم سفیان نقوی کو رضویہ کے علاقے سے گرفتار کیا گیا جس کو مالدیپ میں پروجیکٹ کوآرڈینیٹر کے طور پر بھرتی کیا گیا تھا۔

حکام نے بتایا کہ گرفتار ملزم کے کمپیوٹراورموبائل سےاہم شواہد ملےہیں، جن کا فرانزک جائزہ لیا جارہا ہے، اس حوالے سے ایف آئی اے سے بھی مدد لیں گے اور ملزم سے تفتیش کے لیے جے آئی ٹی بنانے کی سفارش کریں گے۔

تفتیشی حکام کے مطابق سفیان کو پروجیکٹ کوآرڈینیٹر کے طورپر پاکستان میں رہ کر آن لائن کام کی آفر کی گئی اور برطانوی نمبر سے مبینہ بھارتی ہینڈلر نے ملازمت کے معاملات طے کیے۔

اس حوالے سے حکام نے مزید بتایا کہ خاتون ہینڈلر کی جانب سے ملزم کو 30 سے 50 ہزار روپے ماہانہ تنخواہ بتائی گئی۔

سفیان کا کام پاکستان کے خلاف نفرت انگیاز پروپیگنڈہ کرنا تھا جس کے لیے اسے پاک فوج ،خصوصاً سی پیک سےمتعلق نفرت آمیزمواد فراہم کیا گیا۔

ملزم کو پاکستان مخالف عناصر سے رابطوں میں رہنے کی ہدایت کے ساتھ اپنی شناخت چھپانے کے لیے اسے مختلف ایپس کے استعمال سے بھی آگاہ کیا گیا۔

تفتیشی حکام کا کہنا تھا کہ را کا ہدف پڑھے لکھے نوجوان ہیں اور انہیں آن لائن ملازمت آفر کی جاتی ہیں، ان کے مطابق نیٹ ورک کےدیگرافرادکی تلاش بھی جاری ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button