International News
Trending

Indian Army helicopter crashes near Line of Control

Srinagar: An Indian Army helicopter crashed near the Line of Control in occupied Jammu and Kashmir, killing the pilot.

According to Indian media, an Indian Army helicopter crashed in Occupied Kashmir, while a Cheetah helicopter crashed in the Bram area of ​​Occupied Kashmir.

Authorities say the Cheetah helicopter was carrying sick BSF personnel when the crash occurred, killing one pilot and injuring another. The injured pilot has been taken to a medical center.

An official said that the accident took place near Gujran Nala in the avoidance sector of Bandipora district of Kashmir. The helicopter was about to land but crashed due to inclement weather.

Rescue teams have been dispatched on foot, while aerial surveillance teams are searching for survivors.

It is believed that the Indian Army has a fleet of 200 Cheetah helicopters and there have been more than 30 accidents in the last few years, in which more than 40 personnel have been killed.

Indian Army helicopter crashes near Line of Control

سری نگر : بھارتی فوج کا ہیلی کاپٹر مقبوضہ جموں و کشمیر میں لائن آف کنٹرول کے قریب گر کر تباہ ہو گیا، جس کے نتیجے میں پائلٹ ہلاک ہوگیا۔

بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی آرمی کا ہیلی کاپٹر مقبوضہ کشمیر میں گرکر تباہ ہوگیا ، چیتا نامی ہیلی کاپٹر مقبوضہ کشمیر کے علاقے برآم میں گرا۔

حکام نے بتایا کہ چیتا ہیلی کاپٹر بیمار بی ایس ایف اہلکاروں کو لے جارہا تھا ، جب یہ حادثہ پیش آیا ، جس کے نتیجے میں ایک پائلٹ ہلاک اور ایک زخمی ہو گیا، زخمی کو پائلٹ کو طبی مرکز پہنچا دیا گیا ہے۔

ایک اہلکار کا کہنا تھا کہ یہ حادثہ کشمیر کے بانڈی پورہ ضلع کے گریز سیکٹر میں گجراں نالہ کے قریب پیش آیا، ہیلی کاپٹر اترنے ہی والا تھا لیکن موسم کی خرابی کی وجہ سے حادثے کا شکار ہوگیا۔

ریسکیو ٹیموں کو پیدل روانہ کر دیا گیا ہے جبکہ فضائی نگرانی کی ٹیمیں زندہ بچ جانے والوں کی تلاش کر رہی ہیں۔

خیال رہے بھارتی فوج کے پاس 200 چیتا ہیلی کاپٹروں کا بیڑا ہے اور گزشتہ چند سالوں میں 30 سے زائد حادثے ہو چکے ہیں، جن میں 40 سے زیادہ اہلکار ہلاک ہوئے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button