Breaking news

Discover a new part of the human body

Scientists have discovered a new part of the human body that has astonished people in the 21st century, a feat performed by a team of scientists from Switzerland.

With NASA today launching a new دور 10 billion space telescope to unravel the mysteries of the universe billions of miles away, we are still a long way from finding the full human body, and one of its Great proof is this new discovery by scientists.
According to the Annals of Anatomy, medical scientists have claimed to have discovered a new layer under the human skin. Muscle is the part of the muscles of the jaw that lies behind the cheeks and lower jaw.

According to researchers, by 2017, it was thought that the human body had 78 organs, but then the mesentery (the membrane that connects the intestines to the outer part of the stomach) increased, bringing the number to 79, while in 2018 and 2019 it also increased to 2. Claims surfaced to discover new parts.
Discover a new part of the human body

سائنس دانوں نے انسانی جسم کا ایک نیا حصہ دریافت کر لیا ہے، جس نے اکیسویں صدی میں لوگوں کو حیران کر دیا، یہ کارنامہ سوئٹزر لینڈ سے تعلق رکھنے والی سائنس دانوں کی ایک ٹیم نے انجام دیا ہے۔

اس وقت جب کہ ناسا نے آج ہی اربوں میل دور کائناتی اسرار سے پردہ اٹھانے کے لیے 10 بلین ڈالرز لاگت کی ایک نئی خلائی دوربین لانچ کر دی ہے، ہم ابھی تک انسانی جسم کا مکمل پتا لگانے سے بہت دور ہیں، اور اس کا ایک بڑا ثبوت سائنس دانوں کی جانب سے یہ نئی دریافت ہے

 اینلز آف اناٹومی کے مطابق طبی سائنس دانوں نے انسانی جلد کے نیچے ایک نیا حصہ دریافت کرنے کا دعویٰ کیا ہے، ان کا کہنا ہے کہ نچلے جبڑے میں موجود مسلز کی ایک تہہ ہے جو چبانے میں بنیادی کردار ادا کرتی ہے، نیسلٹڈ ڈیپ نامی یہ مسل (پٹھا) جبڑوں کے مسلز کا حصہ ہے جو گالوں اور نچلے جبڑے کے عقب میں ہوتا ہے۔

محققین کے مطابق 2017 تک یہ مانا جاتا تھا کہ انسانی جسم میں 78 اعضا ہیں مگر پھر میسینٹری (آنتوں کو معدے کے بیرونی حصے سے جوڑنے والی جھلی) کا اضافہ ہوا، جس کے بعد یہ تعداد 79 ہوگئی جب کہ 2018 اور 2019 میں بھی 2 نئے حصے دریافت کرنے کے دعوے سامنے آئے۔

۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button