Uncategorized

An important step of the Supreme Court on not making Urdu the official language

ISLAMABAD: The Supreme Court (SC) has taken stern notice of the non-introduction of Urdu as the official language and demanded an answer from the concerned authorities.

According to details, a contempt of court case was heard on the violation of the order to make Urdu the official language. In this regard, the Supreme Court sought reply from the Ministry of Education.

A two-member bench headed by Justice Umar Ata Bandial heard the case.

Justice Umar Ata Bandial in his remarks said that the order of the Supreme Court to make Urdu the official language should be implemented immediately. Apart from education, there is also training.
The Honorable Judge said that it is the responsibility of all citizens to take steps to keep their language alive, we should make Urdu a world language.

He said that Urdu language is not getting any promotion in educational institutions, the federal government should point out which are the institutions to introduce Urdu?

Justice Umar Ata Bandial said that while the other three provinces are protecting their languages, why Punjab is still lagging behind. We will take the issue of Urdu language seriously.

Later, the hearing of the case in the Supreme Court was adjourned indefinitely.

اسلام آباد : سپریم کورٹ نے اردو کو بطور سرکاری زبان رائج نہ کرنے پر سختی سے نوٹس لیتے ہوئے متعلقہ حکام پر اظہار برہمی کرتے ہوئے جواب طلب کرلیا۔

تفصیلات کے مطابق اردو کو بطور سرکاری زبان رائج کرنے کے حکم کی خلاف ورزی پر توہین عدالت کیس کی سماعت ہوئی، اس حوالے سے سپریم کورٹ نے وزارت تعلیم سے جواب طلب کر لیا۔

جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی، اعلیٰ عدالت نے صوبہ پنجاب کے تعلیمی اداروں میں پنجابی لٹریچر نہ پڑھائے جانے پر پنجاب حکومت سے بھی جواب طلب کیا ہے۔

جسٹس عمرعطا بندیال نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ سپریم کورٹ کے اردو بطور سرکاری زبان رائج کرنے کے حکم پر فوری عمل درآمد ہونا چاہیے، تعلیم کے علاوہ ایک چیز تربیت بھی ہوتی ہے۔

معزز جج کا کہنا تھا کہ تمام شہریوں کی بھی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنی زبان کو زندہ رکھنے کیلئے اقدامات کریں، ہمیں اردو کو عالمی زبان بنانا چاہیے۔

ان کا کہنا تھا کہ تعلیمی اداروں میں اردو زبان کو کوئی فروغ نہیں مل رہا، وفاقی حکومت نشاندہی کرے اردو رائج کرنے کے کون سے ادارے ہیں؟

جسٹس عمرعطا بندیال نے کہا کہ باقی تین صوبے اپنی زبانوں کا تحفظ کر رہے ہیں تو اب تک پنجاب کیوں پیچھے ہے؟ اردو زبان رائج کرنے کے معاملے کو سنجیدگی سے دیکھیں گے۔

بعد ازاں سپریم کورٹ میں کیس کی سماعت غیر معینہ مدت تک ملتوی کردی گئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button