Trade

Accused of committing fraud in the name of cryptocurrency rejected the bail application

ISLAMABAD: The Supreme Court (SC) has rejected the bail plea of ​​a man accused of committing fraud in the name of corrupt currency and directed the National Accountability Bureau (NAB) to file a reference against the accused soon.
According to details, the bail application of the accused, who committed fraud in the name of cryptocurrency, was heard in the Supreme Court. The court reprimanded the NAB for delay in filing the reference.
On which the NAB prosecutor said that the accused Wasim Zeb received Rs1.7 billion from the citizens and the money was taken from the citizens and put in corrupt currency accounts.

Justice Omar Atabandial asked if he has heard of corrupt currency and bitcoin, what is it? The NAB prosecutor replied that citizens are given digital coins in exchange for money.
Justice Qazi Amin in his remarks asked why NAB did not trace the assets of the accused. This is the state of investigation in mega scandal too, not basic information.

The lawyer of the accused said that he was accused of taking money but no receipt came to light, then Justice Qazi Amin said that taking money without receipt is the real perfection of the accused.
The NAB prosecutor said that hundreds of victims had recorded statements against the accused, on which the Supreme Court directed NAB to file a reference against the accused soon. NAB Peshawar is investigating the accused Wasim Zeb.


Accused of committing fraud in the name of cryptocurrency rejected bail application
Accused of committing fraud in the name of cryptocurrency rejected the bail application

اسلام آباد : سپریم کورٹ نے کرپٹو کرنسی کے نام پر فراڈ کرنے والے ملزم کی درخواست ضمانت خارج کردی اور نیب کو ملزم کے خلاف جلد ریفرنس دائر کرنے کی ہدایت کر دی۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں کرپٹو کرنسی کے نام پر فراڈ کرنے والے ملزم کی درخواست ضمانت پر سماعت ہوئی ، عدالت نے ریفرنس دائر کرنے میں تاخیر پر نیب کی سرزنش کی۔

جسٹس قاضی امین نے کہا کہ 2،2سال ریفرنس دائر نہ کرنا نیب کی مجرمانہ غفلت ہے، نیب ریفرنس دائر نہیں کرتا اور الزام عدالتوں پرآ جاتا ہے۔

جس پر نیب پراسیکیوٹر کا کہنا تھا کہ ملزم وسیم زیب نےشہریوں سے1 ارب 70 کروڑ وصول کئے،ن شہریوں سے پیسہ وصول کرکے کرپٹو کرنسی اکاؤنٹس میں ڈالا گیا۔

جسٹس عمر عطابندیال نے استفسار کیا کہ کرپٹو کرنسی اور بٹ کوائن کا سنا ہے یہ کیا ہوتا ہے؟ نیب پراسیکیوٹر نے جواب میں کہا کہ شہریوں کو پیسے کے عوض ڈیجیٹل کوئن دیا جاتا ہے۔

جسٹس قاضی امین نے ریمارکس میں کہا نیب نے ملزم کے اثاثوں کا سراغ کیوں نہیں لگایا؟ میگا اسکینڈل میں بھی تفتیش کا یہ حال ہے بنیادی معلومات نہیں۔

وکیل ملزم نے بتایا پیسے لینے کا الزام ہے کوئی رسید سامنے نہیں آئی،تو جسٹس قاضی امین کا کہنا تھا کہ رسید کے بغیر پیسہ لینا ہی تو ملزم کا اصل کمال ہے۔

نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ ملزم کیخلاف سیکڑوں متاثرین نے بیانات ریکارڈ کرائے ، جس پر سپریم کورٹ نے نیب کو ملزم کے خلاف جلد ریفرنس دائر کرنے کی ہدایت کر دی، ملزم وسیم زیب کیخلاف نیب پشاور تحقیقات کر رہا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button