NewsWorld

شمالی کوریا کا کروز میزائل تجربہ

Cruise missiles

شمالی کوریا نے طویل فاصلے تک مار کرنے والے ایک کروز میزائل کا تجربہ کیا ہے جو کہ جاپان کے بڑے حصے کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

اس نئے میزائل کے تجربے کا انکشاف شمالی کوریا کے سرکاری میڈیا ’کے سی این اے‘ نے پیر کے روز کیا ہے۔ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اس میزائل کا تجربہ اتوار کو کیا گیا، میزائل نے 1500 کلومیٹر تک کا فاصلہ طے کیا ہے۔

تاہم کروز میزائل کا یہ تجربہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی شمالی کوریا سے متعلق قراردادوں کی خلاف ورزی نہیں ہے کیونکہ سلامتی کونسل کی جانب سے شمالی کوریا پر عائد کردہ پابندیاں بیلسٹک میزائلوں کے تجربے سے متعلق ہیں نہ کہ کروز میزائلوں سے متعلق۔

لیکن اس سے پتہ چلتا ہے کہغذائی قلت اور شدید معاشی بحران کے باوجود شمالی کوریا اب بھی نئے ہتھیار تیار کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

’کے سی این اے‘ کے مطابق کروز میزائل کا تجربہ ’ہماری ریاست کی سلامتی کی زیادہ قابل اعتماد طریقے سے ضمانت دینے اور دشمن قوتوں کے فوجی ہتھکنڈوں پر مضبوطی سے قابو پانے کے لیے ایک اور موثر تدارک کے طور پر سٹریٹجک اہمیت فراہم کرتا ہے۔‘

امریکہ نے اس معاملے پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس تجربے سے ظاہر ہوتا ہے کہ شمالی کوریا کی ’اپنے فوجی پروگرام کی ترقی پر مسلسل توجہ ہے اور اس کے پڑوسیوں اور عالمی برادری کو خطرات لاحق ہیں۔

امریکہ نے مزید کہا کہ امریکہ کے اتحادی جنوبی کوریا اور جاپان کا دفاع کرنے کا امریکی عزم ’ناقابل تسخير‘ ہے۔

نیوز ایجنسی ’یونہاپ‘ کے مطابق جنوبی کوریا کی فوج نے کہا ہے کہ وہ امریکی انٹیلیجنس حکام کے ساتھ مل کر اِن میزائل تجربات کا بغور تجزیہ کر رہی ہے۔

امریکہ، جنوبی کوریا اور جاپان کے اعلیٰ سطحی حکام شمالی کوریا کو جوہری ہتھیاروں سے پاک کرنے کے عمل پر بات چیت کے لیے رواں ہفتے ملاقات کرنے والے ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button